15/3 دہشت گردانہ حملہ کی تفتیش کے لیے پی ایم جیسنڈا آرڈن نے رائل کمیشن قائم کرنے کا فیصلہ۔ حکومتی دباﺅ سے آزادہ ہوتاہے یہ ادارہ

0
147

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا آرڈرن نے کرائسٹ چرچ کی دو مساجد پر کیے جانے والے دہشت گردانہ حملوں کی انکوائری کے لیے ایک اعلیٰ سطحی رائل کمیشن قائم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے اس کمیشن کے قیام کی ضرورت کے حوالے سے واضح کیا کہ یہ تجویز کرے گا کہ کس طرح پندرہ مارچ کے حملوں سے بچا جا سکتا تھا۔
وزیراعظم کے مطابق رائل کمیشن اس دہشت گردانہ حملے کے ہر پہلو پر تفتیش مکمل کر کے رپورٹ مرتب کرے گا۔ اس کمیشن کے دائرہ کار اور ضوابط کا تعین نیوزی لینڈ کے وزیراعظم کی کابینہ کرے گی۔ وزیراعظم آرڈرن کی کابینہ کرائسٹ چرچ حملے کی تفتیش پر اصولی اتفاق کر چکی ہے لیکن اس کا تعین نہیں کیا گیا تھا کہ انکوائری کا درجہ کیا ہو گا۔
اس کمیشن کے قیام کے حوالے سے نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کا کہنا ہے کہ کرائسٹ چرچ کے حملوں کے بعد پیدا ہونے والی شدید صورت حال تقاضا کرتی ہے کہ اس پرامن ملک میں سلامتی اور قانون کے نفاذ کے لیے مثبت تجاویز مرتب کرنے کا سلسلہ شروع کیا جائے۔ وزیراعظم آرڈرن کے مطابق کمیشن کے اراکین، انکوائری کی مدت اور دائرہ کار جیسے معاملات آئندہ دو ہفتوں میں طے کر لیے جائیں گے۔
امکان ہے کہ یہ کمیشن نیم خود کار ہتھیاروں کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا اور خفیہ اداروں کے کردار پر بھی فوکس کرے گا۔ کرائسٹ چرچ کی مساجد پر حملہ کرنے والے آسٹریلوی شہری برینٹن ٹیرنٹ نے فائرنگ میں جو خود کار رائفل استعمال کی تھی، وہ آسٹریلیا میں ممنوعہ ہتھیاروں کے زمرے میں آتی ہے لیکن نیوزی لینڈ میں ا±سے عام مارکیٹ سے خریدا جا سکتا ہے۔ وزیراعظم آرڈرن نے ان حملوں کے بعد اپنے ملک میں گن کنٹرول کے قوانین کو سخت کرنے کا اعلان کر چ±کی ہیں اور امکاناً اگلے دنوں میں کوئی قانون سازیسامنے آئے گی۔
نیوزی لینڈ کے فوجداری معاملات کے ماہرین کا کہنا ہے کہ اس ملک میں رائل کمیشن جیسا ادارہ حکومتی کنٹرول سے آزاد ہوتا ہے اور اس کی سربراہی ہائی کورٹ کے ایک جج کو تفویض کی جاتی ہے۔ اس ادارے کو یہ اختیار حاصل ہوتا ہے کہ وہ کسی فرد واحد کو گواہی کے لیے مجبور کر سکتا ہے اور متعلقہ اداروں کو دستاویزات کی فراہمی یقینی بنانے کا پابند بھی کر سکتا ہے۔ اس کی تجویزات پرعمل کرنا ہائی کورٹ یا حکومت کے لیے لازمی ہوتا ہے۔

loading...

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here