میرٹھ سے ہندوؤں کے فرار پر بولے یوگی ادتيناتھ- اب ہمارا اقتدارہے، ایسا نہیں ہو گا

0
143

اتر پردیش کے میرٹھ سے ہندو خاندانوں کے مبینہ فرار پر ریاست کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے جواب دیا ہے. سی ایم یوگی نے کہا کہ اب ہم اقتدار میں آ گئے ہیں، اب کون فرار کرے گا؟ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ ذاتی وجوہات سے علاقہ چھوڑ کر سکتے ہیں، لیکن فرار جیسی کوئی بات نہیں ہے۔بتا دیں کہ خبریں آئی تھی کہ میرٹھ شہر کے لساڑي گیٹ تھانہ علاقہ کے تحت پرهلادنگر میں 200 ہندو خاندانوں میں کچھ اپنا گھر چھوڑ کر جا رہے ہیں، یا کچھ جا چکے ہیں۔ وہاں پر بہت سے گھروں اور پلاٹس پردستیاب ہے لکھا ہے۔ ان خاندانوں نے مبینہ طور پر دوسرے خاندانوں پر پریشان کرنے کا الزام لگایا ہے۔ تاہم پولیس اور انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اجتماعی فرار جیسی کوئی بات نہیں ہے اور یہ معاملہ باہمی تنازعہ کا ہے۔اتوار کو وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے سہارنپور میں

صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ میرٹھ سے کوئی فرار نہیں ہوا ہے۔ سی ایم یوگی نے کہا، “میرٹھ سے کوئی فرار نہیں ہے، اتر پردیش میں ہم لوگوں کے آنے کے بعد کون فرار کرے گا ۔ سب سے زیادہ حساس کیرانہ اور کاندھلا تھا، کیرانہ میں 2017 سے پہلے کیا پوزیشن تھی … اب کیا صورت حال ہے۔ کچھ لوگ الٹا الزام لگانا چاہتے ہیں، ہم لوگ کے رہتے ہوئے ریاست کے اندر کوئی فرار نہیں ہو سکتا ہے … میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ ریاست کی 23 کروڑ کی عوام کی حفاظت کی   ذمہ داری ہماری ہے۔سی ایم نے کہا کہ کچھ لوگوں کی مقامی مسئلہ ہو سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افسروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ اس باہمی تنازعہ کو بھی مل بیٹھ کر حل کیا جائے۔میرٹھ کے پرهلادنگر میں رہنے والے لوگوں کا الزام ہے کہ یہاں پر اکثریت معاشرے کی خواتین سے چھیڑ چھاڑ، پرس اور چین سنیچگ کے واقعات اکثر ہوتی رہتی ہے۔ اگر مخالفت کیا جاتا ہے تو مارپیٹ کی نوبت آ جاتی ہے۔ ان واقعات کی وجہ سے ان کا یہاں رہنا مشکل ہو گیا ہے۔ مقامی لوگوں نے کہا کہ انہوں نے پولیس انتظامیہ سے ایسے اسماجك عناصر کے خلاف لگام لگانے کے لئے عرضی دی تھی، لیکن اس کا کوئی نتیجہ نہیں آیا۔

loading...

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here